غزل سفر اور ستاروں سے آگے کی سوچوں۔ مفت معلومات

غزل                      
سفر اور ستاروں سے آگے کی سوچوں   
میں دل کےفشاروں سے آگےکی سوچوں 
میری آگہی نے مجھے ہے سکھایا ! !     
میں جھوٹے سہاروں سےآگےکی سوچوں  
کہیں مل ہی جائےگارستہ کوئی تو      
میں ٹوٹے کناروں سے آگے کی سوچوں 
میں پت جھڑ ہوں سن کےتو حیراں نہ ہو
میں اکثر بہاروں سے آگے کی سوچوں  
جو دل میں اتر کے نکلتے نہیں ہیں    
انہی شاہکاروں سے آگے کی سوچوں   
ہو اس سے ملن کا کوئی معجزہ تو       
نظر اور نظاروں سے آگے کی سوچوں   
گذر تو گئی ہے مگر کیسے بھولوں        
یہ سچ ہےخساروں سےآگے کی سوچوں 

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.