مہنگائی کا طوفان آٹا چینی گھی اور تیل کی قیمتوں کو پر لگ چکے -مفت معلومات

مہنگائی کا طوفان آٹا چینی گھی اور تیل کی قیمتوں کو پر لگ چکے -مفت معلومات

موجودہ صورتحال کے تناظر میں پاکستان کے حالات اور لوگوں کی زندگیاں بد سے بدتر ہوتی جا رہی ہیں ۔سننے میں آیا ہے کہ پھر سے آٹا، چینی اور گھی کے قیمتوں کو پر لگ چکے ہیں ۔جبکہ تیل کی قیمتوں میں اضافے نے غریب کی جھکی کمر کو مزید جھکا دیا ہے ۔اسی پر اکتفا نہیں ہے، شدید گرمی کے عالم میں لوڈشیڈنگ کا عذاب بھی مسلط ہے ۔اس پر ستم ظریفی یہ ہے کہ بجلی کی قیمت میں ہوشربا اضافے سے جو بل آتے ہیں ان کا رونا الگ ہے ۔یعنی انسان کس کس چیز کے لیے ماتم کناں رہے ۔
مہنگائی کے معاملے میں غریبوں کے لیے تو نواز شریف، زرادی اور عمران خان ایک ہی صف میں کھڑے ہیں۔ کیونکہ غریب آج بھی غریب سے غریب تر ہوتا جا رہا ہے اور امیر امیر سے امیر ترین ۔
لوٹ مار اور نفسانفسی کے عالم میں بڑی مچھلی، چھوٹی مچھلی کو کھا کر اپنا شکم سیر کر رہی ہے ۔دو نمبری سے کامیابی کا حصول ممکن ہے جبکہ محنت و ایمانداری کا کوئی صلہ ہی نہیں ۔
وطنِ عزیز میں آج بھی سروائیو کرنے کے دو ہی طریقے ہیں ۔
“یاں تو آپ کے پاس پیسے کی بہتات ہو یا پھر سرکاری عہدہ”۔
وگرنہ غریب آدمی سرکاری ہسپتال میں آپریشن تھیٹر کے باہر ایڑیاں رگڑ رگڑ کر جان دے دیتا ہے اور امیر کے کتے کا بدہضمی کے باعث اعلی و مہنگے ہسپتال سے علاج کروایا جاتا ہے ۔
لائن میں چھ گھنٹے سے لگے لوگوں پر تعلق کی بنیاد پر چھ منٹ پہلے آیا انسان اپنا کام کروانے کا ہنر رکھتا ہے اور آپ سواۓ خون کے آنسو رونے کے کچھ نہیں کر سکتے ۔مطلب ملک میں آوے کا آوا بگڑا ہوا ہے اور حکمران اسے ٹھیک کرنے سے قاصر ہیں۔
کہنا تو نہیں چاہیے لیکن کہے بغیر چارہ بھی نہیں کہ وطن عزیز میں فلحال ذہنی و جسمانی اذیت کے سوا کچھ نہیں ہے ۔
ہمارا ملک ترقی کرے گا مگر شاید ہمارے بعد ہی۔
موجودہ حقائق کے پیش نظر عام آدمی کو اس سے کوئی سروکار نہیں کہ اس کے ملک کا وزیراعظم خارجہ پالیسی میں کون سے جھنڈے گاڑ رہا ہے یاں کتنی تقاریر کر رہا ہے یا پھر کس کس کو بیان دے رہا ہے ۔انہیں تو بس اپنے بچوں کے تعلیم کے خرچے، بجلی کے بل، دال، آٹا، گھی اور اپنے گھر کے ماہانہ بجٹ سے سروکار ہے ۔
جب تک اسے ان چیزوں میں ریلیف نہیں ملے گا تب تک وہ محمود و ایاز کو ایک ہی صف میں شمار کرتا رہے گا ۔

 

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.